Urdu poetry sad | Urdu poetry Love

Urdu poetry sad | Urdu poetry Love

Urdu poetry sad | Urdu poetry Love, What is the poetry of sorrow? – Sad poetry is the expression of your pain and suffering that every person experiences in their daily life. The best thing you can do to express your true sad feelings is to listen to, read, or share sad poems. Almost every poet has described a specific set of sad poetry that you can associate with them if you feel depressed. Sad moments occur in life and leave, and it is up to us how we deal with our sad situations. Some people find themselves in darkness and loneliness to overcome their grief and some find comfort in Urdu poetry.

This is the opposite process that when you feel sad you read or write sad poetry and give other people the chance to feel the same way. In Urdu sad poetry is a great way of expressing your feelings to the world. The best way to express your grief is in your own language. Urdu Sad Poetry Pictures give you the right direction to pen your emotions and thoughts in simple words. Sad poetry in Urdu is a platform that tells your emotional story and relieves you of your obstacles.

 

ہ نصیر اچھا ہُوا دَر مِل گیا اُن کا ہمیں ورنہ
کَہاں رُکتے، کَہاں تھمتے، خُدا جانے کَہاں جاتے

 

شاہوں کے دل تو سنگ ہیں، شاہوں کا ذکر کیا
یہ بھی نہیں کہ حال گدا کا گدا سنے
خود اپنی ہی صداؤں سے گونجے ہوئے ہیں کان

کوئی کسی کی بات سنے بھی تو کیا سنے

سوچتے ہیں کہ کسی اور کو مامور کریں

تم سے پھولوں کی حفاظت نہیں کی جاتی ہے

Urdu poetry Love

تیرے اُتارے ہوئے دن پہن کر اب بھی میں

تیری مہک میں ،،،، کئی روز کاٹ دیتا ہوں

 

خواب کتنا بھی دلفریب سہی
خواب کو ،، بھول جانا پڑتا ہے

 

زندگی ! گر تیری اجازت ہو ؟
آج تھوڑا سا مسکرا لوں میں

 

وہ قحطِ مخلصی ہے کہ یاروں کی بزم میں
غیبت نکال دیں تو ،،،،،، فقط خاموشی بچے

 

جانے کیسی ہو گی خود وہ زندگی
جی رہے ہیں لوگ جس کے نام سے

 

اس دورِ خرد کا ______ یہ المیہ ہے کہ انسان
آپ اپنی ہی لاشیں لئے کاندھوں پہ کھڑے ہیں

 

جو لوگ خوش ہیں محبت میں ان سے پوچھوں گا
یہ کاروبار __________ سہولت سے کیسے چلتا ہے

کوئی کہتا نہیں تھا لوٹ آؤ
کہ ہم پیسے ہی اتنے بھیجتے تھے

 

مجھے تو ہجر کھا گیا تیرا
ورنہ تھا ذکر دلرباٶں میں

 

ک تُو کہ میری ذات کا ،،،،،، حصہ رہے گا تُو
اک میں کہ تیری ذات کو ترسوں گا عمر بھر

 

تُو دیکھ لینا ہمارے بچوں کے بال ،،،،،، جلدی سفید ہوں گے

ہماری چھوڑی ہوئی اُداسی سے سات نسلیں اُداس ہوں گی

 

وه جس کے خوف سے چھوڑا تھا میں نے بستی کو
وه سانپ ،،،،،،،،،،،،،،، پھر میرے سامان سے نکل آیا

 

تُو جب، جہاں بھی، میّسر ہو بس اُسی پل میں

زمانے بھر کے دُکھوں سے نجات ہوتی ہے

 

اٹھائے پھرتے ہو کیا شہرِ بے بصیرت میں
کسے دکھاؤ گے دل کی کتاب رہنے دو

 

جلائیے نہ اِسے ، اتنی سَرد مہری سے
حضُور ! دل ہے میرا ، خار و خس کی بات نہیں

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *